About Me

My photo

I just want to talk and discuss about Islam and other non Islamic organisations like Ahmadis/Qadianis who portrayed them in a guise of Muslims to deceive and betray all human society as its a well known fact their forefather who claimed to be their prophet was planted by British in subcontinent to uproot soul of JIHAD From Muslims . Jews are Jews , Christians are Christian ,Hindus are Hindus so should be Qadianis (Non Muslims) My aim is to discuss Islam with any Muslim or Non Muslim who want to talk and want to know the reality of Islam. that's it ! Let Me welcome all of you interested with good faith . 
Loading...

Thursday, 5 August 2010

امیرشریعت سید عطا ء اللہ شاہ بخاریؒ کے ایک خطاب کا اقتباس

ضبطِ تحریر:ابو سفیان تائب
خطیب الامت، امیرشریعت سید عطاء اللہ شاہ بخاری رحمتہ اللہ علیہ نے تمام عمر خطابت کے ذریعے اللہ کے دین کی تبلیغ کی ۔ خصوصاً عقیدۂ ختم نبوت کے تحفظ اور فتنۂ قادیانیت کے تعاقب واستیصال کے لیے اپنی تمام توانائیاں صرف کردیں۔ تحریک تحفظ ختم نبوت ۱۹۵۳ء میں قید سے رہائی کے بعد آپ شدید علیل ہوگئے۔ مگر جونہی صحت بحال ہوئی تو آپ نے حسبِ سابق تقاریر کا سلسلہ شروع کردیا۔ یہ غالباً ۱۹۵۵ء ، ۵۶ء کا دور ہے ۔ انہی دنوں آپ راولپنڈی تشریف لے گئے اور تحریک ختم نبوت کے حوالے سے ایک جلسۂ عام سے خطاب کیا۔ اس جلسہ میں مولانا غلام اللہ خان رحمہ اللہ بھی سٹیج پر موجود تھے۔ مولانا کے ایک عقیدت مند نے حضرت امیرشریعت کی تقریر ریکارڈ کی مگر بعد میں اس کا زیادہ حصہ ضائع ہوگیا اور دو تین منٹ کا حصہ محفوظ رہ گیا۔ اس میں زیادہ گفتگو عوام کی مناسبت سے پنجابی زبان میں ہے۔ ہمارے کرم فرما جناب ابوسفیان تائب نے تقریر کا یہ حصہ ٹیپ ریکارڈر سے کاغذ پر منتقل کردیا۔ جسے ایفادۂ عام کے لیے ذیل میں شائع کیا جارہا ہے۔

تنبیہ:

حضرت امیرشریعت کی آواز میں مختلف کیسٹس بازار میں فروخت ہورہے ہیں۔ یہ سب جعلی ہیں۔ حالیہ دنوں میں ایک عربی خطبہ بھی موبائل فونز پر مسیج کے ذریعے چل رہا ہے۔ اور یوٹیوب پر بھی موجود ہے۔ اس کے علاوہ یوٹیوب پر اور بازار میں مختلف کیسٹس کے ذریعے حضرت امیرشریعت سے منسوب تقاریر پیش کی جارہی ہیں۔ اطلاع کی جاتی ہے کہ یہ سب جعلی ہیں۔ ان تقاریر میں اردو،عربی الفاظ کا تلفظ بھی غلط ہے۔ قرآن کی تلاوت مجہول ہے۔ یہ سب حضرت امیرشریعت پر تہمت کے مترادف ہے۔ حضرت امیرشریعت کی اپنی آواز میں صرف ایک ہی تقریر کا یہ مختصر حصہ محفوظ ہے۔ جسے قارئین کی خدمت میں پیش کیا جارہا ہے۔ اللہ تعالیٰ ایسے تمام حضرات کو ہدایت عطاء فرمائیں جو اس جھوٹ اور دھوکا دہی کے عملِ قبیح میں مبتلا ہیں۔(ادارہ)

ہم ڈیوٹی پر ہیں۔ جیسے مولانا محمد علی بتا رہے تھے۔ عمل میرا ہو یا نہ ہو لیکن مجھے اپنے خون پر اعتماد ہے۔ ہاں! یہ مجھے یقین ہے کہ میں ہوں بنی ہاشم۔ اپنے علم پر مجھے یقین نہیں۔ تقویٰ تو ہے ہی نہیں۔ کچھ بھی نہیں ہے لیکن مجھے اپنے نسب پر یقین ہے۔ جٹو، او زمیندارو۔۔۔ ہک بوٹا ہووے ککر دا۔ شریک وڈنا چاہوے۔ زمیندار آکھدا اے دس بوٹے تو میرے کولوں ٹاہلی دے گھن۔ ایہہ میرے دادے دا لایا ہویا بوٹا۔ ایہہ نہیں میں دیندا۔ چودہ سو سال توں ساڈی وراثت وچ آیا اے دین، نسلاً بعد نسلٍ۔ تے پشتاں وی اٹھاوی کہ انتّی ہین بس زیادہ نہیں۔ بڑیاں بڑیاں عمراں ہویاں نے وڈیریاں دیاں۔ چودہ سو سال وچ گیارہ گیارہ حافظ ٹبر دے اندر۔ ہن وی الحمد للہ چار پتر چاروں حافظ ، داماد ملیا او ہ وی حافظ ، بھرا جیوندا اوہ وی حافظ۔بڈھی اماں اسی نوے سال دی جیوندی او وی حافظ تے ٹُٹا بھجا میں وی ہاں۔ گو فالج نے حافظہ تباہ کر دتا اے۔ جے سارا نئیں تے کجھ نا کجھ تے اجے وی یاد ہے۔ ایہہ ساڈی وراثت وچ قرآن آیا اے۔ دین ساڈی وراثت وچ آیا اے۔ ساڈے وڈیریاں نے اک راہ پایا اے سانوں، ساڈا اک کر دار ہے، ساڈی اک رسم ہے۔ حق آکھدے آکھدے مرنا ، حق سننا ، حق مننا ، بھانویں کجھ ہو جاوے۔

جو کچھ ہونا تھا ،ہو چکا۔۔۔ جب بھی کوئی نبی سر اٹھائے گا، صدیق اکبر رضی اللہ عنہ کی سنت جاری کی جائے گی۔ (پورا مجمع نعروں سے گونج اٹھا ۔ نعرۂ تکبیر ،اللہ اکبر۔ شہیدانِ ختم نبوت ،زندہ باد، امیرشریعت سید عطاء اللہ شاہ بخاری زندہ باد) ہا۔۔۔ رحمہم اللہ تعالیٰ، رضی اللہ تعالیٰ عنہم وارضا ہ ۔۔۔ میں ان کے لیے کیا دعا کروں؟دعاتو یہ ہے کہ ان کے صدقے میں ہمارا ایمان بچ جائے(آمین) آج پھر سن لو !اساں نئیں ٹلنا۔ کیا ہوگا ،ہوگا کیا ؟ میں کہتا ہوں سب(شہداء ختم نبوت) کی ذمہ داری مجھ پر ۔ جو آئندہ ہوگا اس کی بھی ، اور جو نہیں ہونا چاہیے وہ بھی ہو جائے اس کی بھی ذمہ داری مجھ پر ۔کیا کرو گے ؟ مار دوگے ،پھانسی دے دوگے۔ بس السلام علیکم ۔ اُنج نئیں میں مرنا۔۱۶ ؍ نومبر۱۹۵۴ء نوں فالج دا حملہ ہویا۔مر جاندا تے فیر کی ہوندا؟میں تے چاہناں کسے دے گلے پے کے مراں ۔ میری بیٹی جیہڑی میرے ظاہری اسباب وچ میری حیات دا باعث ہے۔ جنہوں ویکھ کے میں جیوناں ۔ کتنی واری اوہنے مینوں آکھیا !ابا جی ہن تے اپنے حال تے رحم کرو۔ میں ویکھیا اینہیں بڑی دکھدی رگ پھڑی اے ۔ ہے بیٹی۔۔۔ اللہ پتراں نوں وی سلامت رکھے پر بیٹی نال مینوں محبت بہت ہے۔ میں آکھیا ہن میں ایہنوں کس طرح سمجھاواں؟ کہن لگی: ابا جی تہانوں چین نہیں آؤندا۔ تسی سفر دے قابل ہو، ایہہ تہاڈا حال اے ۔ ٹرن پھرن تہاڈے کولوں نہیں ہوندا۔کھان پین تہاڈا کجھ نہیں رہیا۔ کی کر دے او پئے۔ میں آکھیا پتر: توں نئیں اس بات تے راضی نہیں کہ میں باہر نکلا ں میدان دے وچ اور آکھاں ’’لا نبی بعد محمد ،لارسول بعد محمد، لا امۃ بعد امۃ محمد۔ ایہہ کہہ کے میں مر جاواں تے توں خوش نہ ہوویں گی۔ میں کہیا دعا کر ۔کِتے مراں، مسافرت وچ مراں، ایہہ پڑھ کے مراں لا الہ الااللہ محمد رسول اللہ ۔ نمازاں تے اذاناں دے بغیر جہڑا کلمہ پڑھو۔ میں حکم دیناں تہانوں کہ جس طرح میں پڑھیا اس طرح پڑھیا کرو۔ ایہہ بدعت نہیں ہووے گی۔ مولوی غلام اللہ صاحب خاص طور تے پڑھیا کرن۔ ایہہ طالب علماں نوں پڑھاؤ۔ لا الہ الا اللہ محمد رسول اللہ ۔

No comments:

Post a Comment